international

آسٹریلوی سینیٹر کو انڈہ مارنے والے نوجوان کا اکٹھی ہوئی رقم متاثرین کو دینے کا اعلان

نیوزی لینڈ (94news) آسٹریلوی سینیٹر کو انڈہ مارنے والے نوجوان نے اکٹھی کی گئی رقم سانحہ نیوزی لینڈ کے متاثرین کو دینے کا اعلان کردیا۔

آسٹریلوی نوجوان وِل کولونلی نے کہا کہ مسلمان دہشت گرد نہیں، دہشتگردی کا کوئی مذہب نہیں ہوتا۔ول کولونلی کا کہنا تھا کہ میں جمع کی گئی تمام رقم نیوزی لینڈ سانحہ کے متاثرین کے حوالے کر دوں گا۔ واضح رہے کہ سینیٹر پر انڈہ مارنے پر آسٹریلوی سینیٹر کی جانب سے تشدد کا نشانہ بننے والے نوجوان کے لیے 42 ہزار ڈالر کی رقم جمع کی گئی تھی۔ نیوزی لینڈ میں دو مخلتف فنڈ ریزنگ مہم کے ذریعے نوجوان کے لیے فنڈ جمع کیا گیا تاکہ اس کے قانونی اخراجات پورے کیے جا سکیں۔

فنڈ میں 32 ہزار سے زائد ڈالرز جمع کیے جا چکے ہیں جسے نیوزی لینڈ حملے کے متاثرین کو دیا جائے گا۔ یاد رہے کہ نیوزی لینڈ میں مساجد حملوں پر نسل پرست اور مسلمان مخالف بیانات دینے پر آسٹریلیا میں نوجوان نے سینیٹر فراسر ایننگ کو انڈہ دے مارا تھا جس کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھی۔ ویڈیو میں دیکھا گیا کہ ایک سفید فام نوجوان نے اپنے موبائل سے ویڈیو بناتے ہوئے سینیٹر فراسر ایننگ کے قریب جا کر ان کے سر پر انڈہ دے مارا۔جس پر سینیٹرفراسر ایننگ فوری طور پر مڑے اور لڑکے کو تھپڑ اور لاتوں سے مارنے لگے جس پر آس پاس موجود لوگوں نے سینیٹر کو پکڑ کر قابو کیا اور لڑکے سے دور لے گئے تھے۔ جبکہ موقع پر موجود دیگر دو افرد نے لڑکے کو بُری طرح زدوکوب کر کے زمین پر لیٹا دیا اور پولیس نے بعد ازاں انڈہ مارنے والے نوجوان کو گرفتار کرلیا تھا۔

More

Related news

Leave a Reply

Close