کامرس

ڈالر مہنگا ہونے میں کراچی کا 25 رکنی گروہ ملوث، ایف آئی اے

کراچی (94 نیوز) ڈالر مہنگا ہونے اور ڈالر کی مصنوعیقلت پیدا کرنے والوں کے خلاف ایف آئی اے نے تحقیقات کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے تاہم اس معاملے میں کراچی کا ایک 25 رکنی گروہ بے نقاب ہو گیا ہے جو ڈالر مہنگا ہونے کا ذمہ دار ہے جبکہ اس گینگ کا ماسٹر مائنڈ دبئی میں مقیم ہے۔

تفصیلات کے مطابق ڈالرکی اسمگلنگ میں ملوث کراچی کا 25 رکنی گینگ بے نقاب ہوگیا۔ جس میں کراچی کے 8 کرنسی ڈیلرزلاکھوں ڈالرزاوردیگر غیرملکی کرنسی کی سمگلنگ میں ملوث نکلے ۔ حساس ادارے نے وفاقی وزارت داخلہ، چیف کلیکٹرکسٹم اور ڈائریکٹرایف آئی اے سے اسمگلرزاورسہولت کاروں کے خلاف کارروائی کی سفارش کردی۔ ذرائع کے مطابق ڈالراوردیگر غیر ملکی کرنسی کی اسمگلنگ میں مجموعی طور پرکراچی کا25 رکنی گینگ ملوث قراردیا گیا۔

کرنسی اسمگلنگ گینگ میں کسٹم افسران سہولت کاری کا کردار ادا کررہے ہیں۔ ذرائع نےبتایا کہ غیرملکی کرنسی اسمگلنگ گینگ کا ماسٹر مائنڈ دبئی میں رہائش پذیر ہے ۔ حساس ادارے کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ فرحان میمن، محمد اقبال، دانش ابوبکر، مقصود حفیظ، سلیم موتی والا،عمر شمسی اوردیگر کرنسی ڈیلرز اسمگلنگ میں ملوث ہیں۔جبکہ عبدالصمد، ظفر جمال صدیقی سمیت 8 کرنسی ڈیلرز کو حساس اداروں نے کرنسی اسمگلنگ میں ملوث قرار دیا اور ان اسمگلرزمیں عامر انور، فہد انور، امان انور، شاہ فہیم، صلاح الدین،سجاد حیدر، شاہد حسین، محمد آفاق، اشفاق خان اور وقاص الدین اوردیگربھی شامل ہیں۔
ذرائع نے بتایا کہ کسٹم افسران اعظم خالد، رانا صداقت، عمر سرور، زاہد ملک اور عظیم عثمان صدیقی سہولت کار ہیں۔ کسٹم افسران گینگ کے کارندوں کو کراچیائیرپورٹ پر غیرقانونی کرنسی کی کلئیرنس میں سہولت دے رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق اس حوالے سے تیار کردہ سرکاری رپورٹ وفاقی وزارت داخلہ، چیف کلیکٹر کسٹم اور ڈائریکٹرایف آئی اے کو ارسال کردی گئی ہے ۔
مزید

متعلقہ خبریں

جواب دیں

Close