قومی

نوازشریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان نے خاموشی توڑ دی، دھمکیاں دی جا رہی تھیں

لندن (94 نیوز) سابق وزیراعظم نوازشریف کے معالج ڈاکٹر عدنان نے خود پر ہونے والے حملے سے متعلق خاموشی توڑدی اور کہا ہے کہ انہیں فون پر دھمکیاں دی جارہی تھیں ۔حملہ آوروں نے بدترین تشدد کا نشانہ بنایا جس کی وجہ سے ابھی تک ہسپتال میں ہوں اور کل کمر کا سکین ہونا ہے جس کے بعد طبیعت کے بارے حتمی طورپر کچھ کہہ سکیں گے۔

تفصیلات کے مطابق نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان پر حملہ کیس میں پیشرفت ہوئی ہے۔پولیس ذرائع کے مطابق ڈاکٹر عدنان پردو مشتبہ افراد نے حملہ کیا اور جاتے ہوئے گھڑی بھی چھین کر لے گئے، ڈاکٹر عدنان پر 8 بج کر 39 منٹ پر پارک لین پر حملہ کیا گیا۔ڈاکٹر عدنان حملے کے نتیجے میں شدید زخمی ہونے سے محفوظ رہے۔ ڈاکٹر عدنان کی حالت خطرے سے باہر بتائی جاتی ہے۔تحقیقات کیلئے خصوصی پولیس آفیسر مقرر کردیاگیاہے ۔

یاد رہے کہ ڈاکٹر عدنان کو گزشتہ شب پارک لین میں اس وقت تشدد کا نشانہ بنایا گیاتھا جب وہ وہاں چہل قدمی کررہے تھے۔پولیس کے مطابق نامعلوم افراد نے انہیں راڈ کی مدد سے تشدد کانشانہ بنایا۔

مزید

متعلقہ خبریں

جواب دیں

Close