National

Do we know how to use their peace of suo moto hy.asf Khosa

Islam Abad (94news) Chief Justice Asif Saeed Khosa said sumutukaaktyarbht reduce kyajayyga, there are not hugajhan dusrahl suo motu, the court should krastamal hdudmyn roles.

چیف جسٹس ثاقب نثار آج ملازمت سے ریٹائر ہو رہے ہیں اور ان کے اعزاز میں سپریم کورٹ میں فل کورٹ ریفرنس کا انعقاد کیاگیا ہے ۔ اس موقع پر نئے چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ ہم جڑواں بچوں کی طرح ہیں جوآج الگ ہوجائیں گے، کسی سرجری نہیں بلکہ آئین کے تحت الگ ہوں گے، چیف جسٹس نے مشکل حالات میں عدالت چلائی، چیف جسٹس کی انسانی حقوق سے متعلق خدمات یادرکھی جائیں گی، ،تمام ججزچیف جسٹس کی کمی محسوس کریں گے۔

Justice Asif Saeed Khosa said stating their future course of action that will ensure uninterrupted supply of bturcyf bnau¿n Justice Justice, tamyrcahtahun of the dam in such venues, CJ tried jldfyslun of pending cases, in the country kaqrz Best I, will bring zyraltuamqdmat kaqrz, courts 19 Kyszzyraltuahyn million, 3 Hzarjjz 19 No nmtaskty million cases.

انہوں نے اعلان کرتے ہوئے کہا کہ جعلی گواہوں کیخلاف بھی ڈیم بناناچاہتاہوں، ہائیکورٹ کواختیارات حدودمیں رہ کراستعمال کرنے چاہئیں، سوموٹوکااختیاربہت کم استعمال کیاجائےگا، سوموٹووہاں استعمال ہوگاجہاں دوسراحل نہ ہو۔ ان کا کہناتھا کہ عدلیہ نے اداروں کے اختیارات میں کہاں مداخلت کی؟، مقننہ کاکام صرف قانون سازی ہے، مقننہ کاکام ٹرانسفرپوسٹنگ بھی نہیں، سول اداروں کی بالادستی ہونی چاہیئے۔

He said the missing afradkamaamlh is very serious, need considering past mistakes, do not hesitate to discuss any issue we really need to tell the truth. Justice Asif Saeed Khosa said that cartraf governance requires debate, functional state institutions necessary for democratic stability.

More

Related news

Leave a Reply

Close