قومی

سانحہ ساہیوال پرجے آئی ٹی کی رپورٹ مسترد،بریفنگ سے مطمئن نہیں، جوڈیشل کمیشن بنایا جائے:حمزہ شہباز

لاہور(94نیوز) پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز نے سانحہ ساہیوال پرجے آئی ٹی کی رپورٹ مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس دل دہلا دینے والے سانحہ پر قوم حقائق جاننا چاہتی ہے، اس کے لیے بلا تاخیر جوڈیشل کمیشن بنایا جائے، ہم ان کیمرہ بریفنگ سے مطمئن نہیں،ذمہ داروں کو کیفرکردار تک پہنچایا جائے ،ہم اس ہولناک ایشو پرسیاست نہیں کرنا چاہتے۔

سانحہ ساہیوال پر بنائی گئی جے آئی ٹی کی رپورٹ پرممبران اسمبلی کو ان کیمرہ بریفنگ کے بعد پنجاب اسمبلی کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے حمزہ شہباز کا کہنا تھا کہ اپوزیشن یتیم بچوں کو انصاف دلا نے تک اپنی جدو جہد جاری رکھے گی، سانحہ میں ملوث ملزمان کو اسی جگہ پر پھانسی دی جائے جہاں یہ سانحہ ہوا تھا ورنہ بچوں کے یہ زخم تازہ رہیں گے، اس واقعہ پر قوم بے چین ہے اور حقائق جاننا چاہتی ہے۔انہوں نے کہا کہ سانحہ ساہیوال پر جے آئی ٹی وقت کا ضیاع ہے،فوری طور پر جوڈیشنل کمیشن بنایا جائے، ان کیمرہ بریفنگ کے ذریعے حقائق کو چھپانے کی کوشش کی جا رہی ہے، ایسا نہیں ہونے دیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ مجھے تایانواز شریف کو ملنے جیل جانا ہوتا ہے،ان کی صحت ٹھیک نہیں جس پر تشویش ہے،آج نہیں پتہ تھا کہ جیل نواز شریف سے ملنے جاؤں یا اسمبلی آؤں،مقتول خلیل کے بچے بہت معصوم ہیں جب میں ان سے ملنے ان کے گھر گیا توان کی آنکھوں سے آنسو گررہے تھے ہم نے ان بچوں کو انصاف دلانا ہے اس لئے اسمبلی آیا ہوں، جب تک ملزمان کو پھانسی نہیں ہوتی بچوں کو سکون نہیں ملے گا۔انہوں نے کہا کہ اتنا بڑا واقعہ ہوگیا لیکن ان کیمرہ بریفنگ کے موقع پروزیر اعلیٰ ایوان میں موجود نہیں تھے، اس سے حکومت کے سنجیدہ ہونے کا  پتہ چلتا ہے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ اس واقعے پر فوری جوڈیشل کمیشن بنانا جائے ،اسے سیاست کی نذر نہیں ہونا چاہیے،جو بھی اندر بریفنگ دی گئی پارلیمانی روایات کا امین ہوں لیکن ان کیمرہ بریفنگ کے بعد آج محسوس ہوا کہ جوڈیشل کمیشن بننا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ پولیس والے جب خود جے آئی ٹی کا حصہ ہوں گے تو انصاف کہاں سے ملے گا؟ اسی لئے ہم کہتے ہیں کہ متاثرہ خاندان کو انصاف فراہم کرنے کے لئے جوڈیشل کمیشن بنایا جائے ۔انہوں نے کہا کہ حکومت کو ایسے بیانات نہیں دینے چاہیے کہ ایسے واقعات ہوتے رہتے ہیں،حکومت نے کہاکہ جوڈیشل کمیشن بنائیں گے ،کب بنائیں گے؟،میں اس معاملے میں سیاست کونہیں لانا چاہتا لیکن اپوزیشن یہ کہتی ہے جے آئی ٹی سے حقائق سامنے نہیں آسکتے،جس دن سانحہ ماڈل ٹاؤن ہوا تھا تو رانا ثناء اللہ نے استعفی دیا تھا،سانحہ ساہیوال کا معاملہ جوڈیشل کمیشن کے بغیر حل نہیں ہوسکتا۔

مزید

متعلقہ خبریں

جواب دیں

Close